شفٹنگ

24

آ یک پیما منی نامءَ کَلاگ بندگا اَت، ”تُم بلوچیوں کے نام بہت عجیب سے ہوتے ہیں، کیسے رکھتے ہو تم لوگ ایسے نام۔

تم ایسا کرو اپنا نام چینج کرو۔ میں تمہیں آج سے کنول کے نام سے بلائونگی“۔

من بے ترکءُ توار اتانءُ آئیءِ گپاں گوشدارگءَ اتاں۔گالوارئِے سَک زِبر اَتءُ پورا منا توکا شَکُرّگا اَت، بلے من ہچ نہ گشت۔

دیکھو برا مت ماننا، مجھے بلوچ بالکل پسند نہیں ہیں“۔”

اے جنین، کہ من اشیءِ لوگ ءِ باڑا زیرگا اتکگ اتاں، گشگا اَت کہ ”من وتی لوگءَ بلوچءُ سندھیاں ہجبر نہ دیاں، اے دوئیں منا ہچ دوست نہ بنت، بلے من چہ خان بھائیءَ نااِلاجاں۔

تم میرے احسان مند رہو کہ میں تمہیں اپنا گھر کرائے پہ دینے پہ راضی ہوگئی ہوں ورنہ بلوچیوں کا  سنتے ہی میں منع کردیتی ہوں۔۔۔۔تم اس شہر میں آئی ہو، یہاں اپنا نام یہ بالکل مت رکھنا۔ ویسے تمہارے نام کا تلفظ بہت ہی عجیب نہیں ہوگا؟ کیسے تلفظ میں آتا ہے، کیا بتایا تم نے؟ ”ماہا“ اور یہ ”گنج“ تو بہت ہی عجیب ہے۔ ہاہاہاہاہا۔۔۔“۔

اے اولی رَند نہ اِنت کہ منی گوما چُش بوگا اَت۔ ہما اِنت من اے شہرءَ اتکگ اتاں، من ہرکسءَ را کہ ڈیک داتہ، وانگجاہءَ ہم، آہانی ہیال ہم منی نامءِ سرا انچش اتنت۔ جندءِ نام اش وَ یکدم دگہ ڈولین اتنت۔

باز مردمءَ وَ ہجبر منی نام پورہیءَ نہ گِپت۔ منی گیشتریں فرینڈز منا ”ماہا“ توار کنگا اتنت۔ بازیں بلوچ ہم انچش اتنت، کندگءُ جست کنگا اتنت کہ ترا چشیں نامے چیا بستگ اِش؟ چہ اے نامءََ شرتر اِنت کہ ترا مسلمانی نامے پر اِش کُتیں۔ اے زانگءَ نہ اتنت کہ ہمے ناماں کہ اے مردم اسلامی نام گشگءَ اَنت، اے اہم اسلءَ اسلامی نام نہ اَنت، عربی نام اَنت۔

بلے اے گَنجیں کُنّتءُ کلاگ بندگاں، منا ہجبر اے گپ باور کنائینت نہ کت کہ منی نام شر نہ انت، چیا کہ آ جاگہہءَ کہ من رُستہءُ مزن بیتگاں، اودا شریں نام ہمیش اَنت، سکیں خوبصورتیں پجارے اے نامانی تہا، جندءِ پجار۔ کَسے ءَ کہ وتی پجار دوست مہ بیت، وتی چاگردءِ پجارءَ چوں سر بیت کنت۔ کسے کہ وتی جندءِ نامءِ ماناءِ شوہازءَ روچے کتابے بہ پٹیت، چاگردءِ پجارءَ چونچو اُمر جنت۔


لیکن مجھے میرے گھر میں تمہارے گاوں سے سے آئے ہوئے لوگ بالکل نظر نہیں آنے چاہئیں، نہیں تو میں کسی بھی وقت تمہیں گھر سے نکال سکتی ہوں“۔ ، نامءَ ابید اوں دگہ شرط ہست اے جنینءَ ۔ من ہیران اتاں کہ من وتی مردماں وتی لوگءِ آیگا چونیءَ نئیشت کناں؟ من اشیءَ چوں سرپد بکناں کہ من چہ وتی میتگءَ لڈّتگاں، چہ وتی جندءَ اِنّاں۔ چہ وتی مہراں اِنّاں, ءُ ہمے دمانءَ دگہ شرطے اَتک، ”اور ہاں، تم وہ ٹیپیکل والی بلوچی تو نہیں ہو نا، جو گھر میں ادھر اُدھر بیٹھنے کیلیے بھی تکیہ وکیہ رکھ دیتے ہیں؟ مجھے ایسی چیزیں میرے گھر میں نہیں چاہئیں، یہ ابھی سے ذہن میں رکھ لینا، مجھے میرے گھر میں ایسا ویسا کچرا نہیں چاہئے“۔۔

اے سیمی ماہ اِنت من اے شہرءَ لوگءِ پٹگءَ تچگءَ اتاں۔ چہ ایشیءَ پیسر سے لوگ درگیتکگ اَت، بلے سے ئیں لوگانی واہنداں مارا وتی لوگ اے واستا نہ داتگ اَت کہ ما بلوچ اتیںءُ آ وتی لوگاں بلوچانءَ دیگءَ نہ اتنت۔

نوں وَ یک تاریخءَ بس دو روچ پشکپتگ اَت، ءُ یک تاریخءَ مارا وتی اے لوگ ہالی کنگی اَت، اے لوگءِ واہندءَ ہم بلوچ دوست نہ بیت اَنت، ءُ گشتگ ات ئِے کہ منی لوگءَ ہالی کن اِت۔

مارا اوں روچاں گپتہ۔۔۔ نوں یکیں راہ اَت، کہ ہمے لوگءَ بزیریں، ءُ منی نام، منی پجار، منی دودمانءِ باروءَ ہرچی کہ لوگءِ واہند گشگا اَت، درستاں برداشت بکناں۔

مات لوگءَ منی ودارءَ اَت، ہمے اُمیدءَ کہ مرچی مارا لوگے رسیتءُ اے رَندی مئے لوگءِ سامان دمکءَ دور دیگءَ پیسر دگہ لوگےءَ برگ بنت۔

من ہمے گپاں دلءَ جیڑانءُ روان اتاں کہ لوگءِ واہندءَ چہ پشتءَ منا توار جت۔ ”ماہا، کل ایڈوانس کے ساتھ آجانا، اور ہاں اپنا نیا نام سوچ کے آجانا“۔

بلے من آئیءِ لوگ ریجیکٹ کتگ اَت۔

من انچیں لوگے پٹگا اتاں کہ اودا منءُ منی نام یکے بیت بکنیں، ہوار نشت بکنیں۔

چشیں لوگءَ من چے کناں کہ اودا منءُ منی پجار ہور بیت مہ کنیں، منءُ منی نام، منی پجار، گوں یکے دومیءَ پہ نادلکشی لچینگ بہ بئیں۔۔۔ بلے ہما اِنت کہ چہ وتی لوگءَ در اتکگ اتیں، دنیگہ ہچ جاگہ اے لوگ رسگءَ نہ اَت کہ منا ءُ منی نامءَ، منی پجارءَ یک جاگہ بداریت، بے جُستءَ، بے رِیشکندءَ۔

+ posts

Sajid Hussain (1981-2020) was a writer and senior journalist from Balochistan. He had a degree in Economics, International Relations and English Literature from Karachi University. He had the experience of working with Pakistani newspapers Daily Times and The News International. Sajid Hussain was also the founding editor of this online magazine.