Home / Balochi / سیہ گوْات ءِ ڈیہہ

سیہ گوْات ءِ ڈیہہ

نودان ۔ تپتگیں سِنگ ءُ سْریمُگیں کوہانی ڈیہہ۔ گوریچ، لوار ءُ سیہ گوْات ءِ ہنکین۔

کسانی ءَ ،کوہاں کہ سیہ گوات ءَ بَستہ ما تچاں تچان ءَ مات ءِ ہمرائی ءَ پیژگاہ ءِ تاپیں گُد ءُ تہتانی سر ءِ ایران چِتگ ءُ بان ءِ تہا پناہگیر بوتگیں۔ دروازگ ءِ بندگ ءِ ہمرائی ءَ گوْات ہم ژپّگ ءَ رستہ۔ ما دروازگ گوں دوئیں دستاں تاں ہما وہدا داشتہ کہ گوْات ءَ بس نہ کتہ، ہمے تُرس ءَ کہ تہتگ چہ کبزاں در مئیت۔

کسانی ءَ ما گشتہ کوہانی تہا تہنا سیہ گوْات نشتگ، یا جِن ءُ پری آباد انت۔ سیہ گوات وَ ما چم ء وت چہ کوہاں آہگ ءَ دیستہ، جِن ءُ پریانی کسہ چہ بَلّک ءِ دپ ءَ اِشکتگ انت۔ گُشتگ ئےِ مئے بُن پیرک یک رندے شکار ءَ کوہ ءَ شُتہ، دیستگ ئےِ چہ رَمگ ءَ سِستگیں گَٹّور ے بارَگا اِنت۔ آئی ءَ گّٹور بڈّءَ کُتہ کہ بلکیں واہُند ئےِ دراَتک۔ کمے دیماکہ شُتہ گٹّور ءَ وتی سر کشّتہ، پاد لونجان کتگ انت، دنتان نجینتگ انت ء ُ گوں مئے بُن پیرک ءَ درّائینتہ: ’’مزار، تو اے وڑیں دنتان دیتہ؟‘‘ پیرُک ءَ زانتہ جنّے کہ وتا گٹّورے کتگ ئےِ۔ بلے آئی ءِ جان ءِ پُٹے ہم پاد نیاتکہ۔ زہم ئےِ کشّتہ : ’’تو اے وڑیں زہم دیتہ؟‘‘ جِن چہ تُرس ءَ لرزگ ءَ لگّتہ، پریاد ئےِ کُتہ کہ ’’منا مہ کُش، مں وتی جِنک ءَ گوں تو سانگ دئیں۔‘‘ ہمے وڈا مئے پیرک ءَ پری یے سانگ کُتہ۔

مارا مدام کہ شپاں تُرسِتہ، بلّک ءَ یا مات ءَ ہمے کسہ آؤرتہ ءُ مارا دلڈڈی داتہ کہ جن مارا ہچ نہ کننت کہ مئے وارث انت۔

من ہمے کسّہ اسکول ءَ سنگتے ءِ کرّا آؤرت۔ آئی ءَ ہم ہمے گشت کہ آہانی بلّک ءِ ہساب ءَ آہانی پیرک ءَ پری یے سانگ کتہ۔ پدا دگہ سنگتے دراتک کہ جنّ ئےِ وتی سانگبند کت انت۔

نودان ءَ جِن ءُ پری مئے سیاد بوتگ انت۔ ما بانانی تہا نشتگ ایں ء ُ جن کہ چہ کوہ ءَ بازار ءَ اتکگ انت کہیرانی تہا نشتگ انت۔ کہیر جنّانی لوگ بوتگ انت۔

یکے رندے مئے نوک سوریں ہمسائگیں جنینے جِن ءَ گپت۔ شپاں آئی ءِ لولارَگاں مارا پددَرْہینت۔ مئے پیرُک ءَ مسیتے ہست ات کہ ہودا آ ءُ دگہ چار پنچ مردماں روچے پنچ رند ءَ نماز ونت ءُ کشار ءُ شِکار ءِ کسّہ آٰؤرت۔ جنین ءِ وارثاں مئے پِیرُک کّڈن کُت کہ بیا جن ءَ کش۔

 ما ہم ندارہ چارگا شُتیں۔ جنین گُج ءُ کپ ات ۔ پیرُک ءَ ہزرانے گون ات آئی ءَ جنگا ات۔ ’’تو جنّے ئے کہ پری یے، چہ چُکّیں لنکک ءَ درا۔‘‘ آئی ءَ ہکل دات۔

جن ءَ منی پیرک تُشے ہم مان نیاؤرت: ”مُلا، بُرؤ بانگے بدئے۔ منی سرا بہ کپ۔ اے جنین مں پہ دوستی گپتہ۔ من گُشاں منی کار ءَ کار مدار،‘‘ چہ جنین ءِ گُٹ ءَ گرّناکیں مردینی آوازے دراہگا ات۔

منی پیرک ءِ دل ءَ جِن پورا مردمے ات: ”تئی بہت کپتہ۔ اے زال ءَ گُل ہُرّیں مرد ے ہست، ترا چے کں؟ مں گُشیں درا چہ چُکّیں لنکک ءَ۔‘‘ آئی ءَ سر بُرز ءَ کُت ءُ آیتے وانگا لگّت۔

دمانے نہ گوست جنین درْہینگے ءَ گپت۔ آئی ءِ چمّانی سیاہگ شُت انت۔

جِن ءَ پدا جَبزہ کُت: ”من گُشیں مُلا منی کار ءَ کار مدار۔ مں ہپت برات ءِ براتاں، بی۔ایس ۔او ءِ صدراں، تئی سجہّیں چُک ءُ نماسگاں گنوک کئیں“۔

نودان ءِ جنّ ہم بی۔ایس۔او ءِ باسک بوتگاں۔ درْچک ءُ دار ہم۔ چُشیں درچک کم بوتگ کہ آئی ءِ سر ءَ بی۔ایس۔او ءِ بیرک  مِک نہ بوتہ۔

نودان ءَ درْچکاں نام پِر بوتہ ۔ مئے پیژگاہ ءِ چنال ءِ نام لاگر بوتہ۔ بِہانی بِہہ گمرو ئےِ نہ کتگ، شاہ ئےِ نہ جتہ۔ بس دراج دراج ، بارگ بارگ ءَ گوات ءِ ہمرائی ءَ چو قران وانیں زہگ ءَ کوچنڈ اِتگ ئےِ۔ مات ءَ گُشتگ چنال ءَ جنّے ءَ گوں جن ءُ چکّاں لوگ ءُ جاگہ کُتہ۔ پدا ما زانتگ کہ چنال  کُتگیں سنگے ءِ سر ءَ کِشگ بوتہ، پمشکا جہل ہنڈال نہ جنت۔

مئے بازار ءِ نام ڈل ءِ بازار بوتہ ءُ ما گُشتہ زمین ءِ چیرءَ تہنا سنگ مان۔ منی پِت ءَ مئے بان ءِ کَش ءَ ڈگارے ہَرِن کُت۔ شپ ءَ ما ءُ مئے ہمسائک نشتیں ءُ ڈگار ءِ سِنگ در کلونڈ اتنت۔ روچ ءُ ہپتگ ءُ ماہ گوْست انت، ما ہمینچو سنگ کشّ اِت چِد ءُ گیشتر در اَتک۔ ڈگار دنیگہ ہما وڑا گیرآباد انت۔

نودان تہنا مئے، کوہانی، سِنگانی،جنّانی، پریانی، گوریچ ءِ، لوار ءِ، سیہ گوات ءِ ڈیہہ بوتہ۔ ما نزانتہ کوہاں سُہر مان، زمین ءِ چیر چہ گَنج ءَ پُر اِنت۔ مئے ڈگار کہ ٹریکٹر ءَ ننگار کُتہ ڈوک دراہان بوتہ، ما کہ ٹیری ءِ لئیب ءَ پِل جَتہ سُہر درنیاتکہ۔

مارا پہ گنج ءَ گَرزے ہم نہ بوتہ۔ نودان مئے ڈیہہ بوتہ ءُ مارا دوست بوتہ۔ زمستان ءَ مارا بادینتہ، گرماگ ءَ پیلوشتہ، بلے مارا انگہ وَش بوتہ۔ گوریچ ءَ کشّتہ ما چادرے سرءُ گوشاں مانپوشتہ روتاپگ ءِ سر ءَ نشتگیں۔ لوار ءَ، گوں گُداں جُو ءَ جان شُشتہ ءُ کاپر ءِ چیرءَ پناہگیر بوتگیں، یا شپ ءَ چادر آپ جَتہ ءُ پرداتہ۔ مات ءَ نُرنڈ اِتہ کہ آپ تابہ یے گیپت۔

ما نزانتہ دنیا ءِ دگہ مُلکے ءَ چد ءُ شرتریں موسم بوت کنت، چد ءُ وشتریں زیدے ہست۔ نودان مئے دنیا بوتہ۔

اے ہما وہد ءِ گپ انت کہ نودان ءَ کس گار نہ بوتہ۔ ہر کس ءَ ہر کس پجّہ آؤرتہ۔ یک رندے مں وتی پت ءِ گاڑی ءِ رندا کپتاں ءُ لوگ ءِ راہ گار کُت۔ سک گْونڈ اتاں، پِت ءِ نام منی کرّا انگہ ابّا ات۔ مردے ءَ منا دیست، زانت ئےِ گاریں چُکّے۔ منا جُست ئےِ کُت کئی چُک ئے، من گُشت ابّا ءِ۔ پہ شّریں دمانے منا چارِت ئےِ پدا دست ءِ گپت بُرت ئےِ منی پیرُک ءِ لوگ ءَ۔ ’’ یَہ!! اے منی نُماسگ تو چہ کو چِتہ؟‘‘ پیرک گُڑتگہ۔

مرد ءَ درّائینت: ”مُستُک ءِ پَل ءِ کرّا یلہ ات۔ مں چم چارِتاں زانت شمئے کُٹم ءِ چکّے۔‘‘ آئی ءَ ہمے ہبر انچو پہ پہرے کُت گشئے چمزانتی ءِ علم ءَ نوبل داد ئےِ گپتہ۔

آ وہداں چہ چمّاں، چہ پَداں مردم پجّہ آرگ بوتگ انت۔ پسے، دلوتے گار بوتہ، ما پد گراں کتہ شوہاز اِتہ۔ نودان ءَ درآمد یں پد، ناآشنائیں چم نہ بوتہ۔ برے برے پٹھانے ءَ بُکچہ یے بڈ ءَ بوتہ گُد ءِ یا قالین ءِ بہا ءَ اتکہ۔ سالے یک رندے کُرنڈُکیں جنین اتکگ انت ءُ فُٹ بال ءِ گراؤنڈ ءَ تمبو اِش جتہ نشتگ انت۔ منگلیک ءُ ایدگہ جنینی ازباب اِش بہا کُتہ۔ بلے آ ہم درامد نہ بوتگ انت۔ سالانی سال ءِ رو ءُ آ ءَ آ ہم آشنا بوتگ انت۔ آہاں نودان ءِ درستیں مردمانی نام زانتگ انت، مئے زبان ءَ گپ جتہ، ما ہم آ پجّہ آؤرتگ انت۔ وہدے ہپتگے دہ روچ ءَ رند آہاں وتی تمبو کروتگ ءُ دگہ ہلکے ءَ شُتگ انت، نوداں ابیتک بوتہ۔

درآمد تہنا ما برے برے راہ ءِ گوْزگ ءَ دیستگ انت۔ ماہے یک ءُ دو رندا لونڈوہانی گاڑی یے گوْستہ۔ ناں ما آہانی نام زانتگ ناں آہاں مئے۔ ما ڈوک چتگ ءُ آہانی رندا کپتگیں۔ تپنگ آہانی کُٹ ءَ ایر بوتگ انت ءُ نَل اش مئے نیمگا۔ دیم ءَ کہ بندے اتکگ ءُ ما گاڑی ءِ نزّیک ءَ رستگیں آہاں مئے گَلّینگ ءِ واستا مارا تُک جتہ۔ برے برے گوات کہ ترُند بوتہ تُک ہماہانی جند ءَ لگّتہ ءُ ما دل ءِ سیر ءَ کنداِتہ۔ ما را اے گت ءُ گمان نہ بوتہ یک روچے لونڈوانی گاڑی نودان ءَ داریت ءُ آ شہر ءِ درْستیں دمکاں بندنت ءُ نندنت۔

مارا دیر انت چہ نودان ءَ لڈّاتگیں۔ چہ ما رند دگہ بازینے لڈّتہ۔ بازینے گار بوتہ۔ پنچ سال پیسر کہ مں نودان ءَ لہتیں روچ ءِ واستا ترّ ءُ تاب ءَ شُتاں منا تُشے وش نہ بوت۔ بان ءُ کمپان ہالیگ اتنت۔ کزا بانے ءَ مردم مان ات۔ من دل ءَ گُشت نوں جنّ کہیرانی بدل ءَ یلہ داتگیں بانانی تہا نشت کننت۔ بلے بہ گندئے جنّاں ہم نودان ویل کُتہ۔ نوں گوْناہاں کئے سانگ کنت۔

بلے سیہ گوات وَ انگہ کوہانی تہا اِنت ءُ دائم بیت۔ آ کہ بندیت ءُ کئیت، نودان ءَ درامد یں پَد نہ مانیت۔ بلے مئے مُرتگینانی کبر ماننت، ءُ کس وتی مُردگاں یلہ نہ کنت۔

About Sajid Hussain

mm
Sajid Hussain is a journalist. He has worked for The News International, Daily Times and contributed for the Reuters news agency. He also writes fiction and literary articles.

Check Also

مذہب مُلّا ءَ وتی لاپ کتہ، بلئے تاں کدین ءَ

دیریگیں گپّے کہ خیر بخش مری یورپی پولکارے ءَ گُشیت کہ بلوچ ءِ گوْرا مذہب …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *